1.  Home/
  2. Ikram Sehgal/
  3. Badunwani Se Larna Badla Ya Insaf

Badunwani Se Larna Badla Ya Insaf

زیادہ تر معاشروں میں بدعنوانی کی ایک خاص مقدار کے ساتھ، بدعنوانی بلاشبہ پاکستان کی بدترین خصوصیت ہے۔ دہائیوں کے دوران یہ بڑے تناسب تک پہنچ گئی ہے، اب ریاست کو کمزور کر رہی ہے۔

جہاں یہ ریاست کے تمام اداروں میں موجود تھی وہیں اب قیادت کے اعلیٰ طبقوں میں بدعنوانی ریاست کو نقصان پہنچانے کا ہتھیار بن چکی ہے۔ اخلاقی تنزلی کو ایک طرف چھوڑیں، پاکستانی معیشت کی زوال پذیری، غربت میں اضافہ اور غذائی تحفظ میں کمی کی بڑی وجہ ہے۔

اس طرح امیر امیر تر اور غریب غریب تر ہوتا جا رہا ہے۔ اگرچہ اس نے یقینی طور پر بڑے پیمانے پر احتجاج کو جنم دیا ہے، لیکن بہتری کی امید کم ہوتی جا رہی ہے۔ لیکن بدعنوانی سے لڑنا قوم کے بہترین مفاد میں ہے، خاص کر غریبوں اور محروموں کے۔ اس کا الٹا پہلو یہ ہے کہ عملی طور پر جو لوگ بدعنوانی پر پروان چڑھنے کی عادت رکھتے ہیں اور اس سے مالا مال ہو چکے ہیں انھیں پیچھے رہنا پڑے گا، اپنی روش بدلنی پڑے گی یا پھر باہر نکلنا پڑے گا۔

اس کے لیے قوانین اور قابل اعتماد قانون نافذ کرنے والے اداروں کو لاگو کرنا ہوگا، جو ان لوگوں کے ذریعہ چلائے جائیں جو ایمانداری سے اپنا کام کرنے کے لیے تیار ہوں۔ وہ رہنما جو لالچ کی قربان گاہ پر اپنے ضمیر سے سمجھوتہ نہیں کریں گے۔ پاکستان کے وجود کی پہلی دہائیوں کے دوران اس صورت حال کو تسلیم نہیں کیا گیا کہ اس سے قوم کے اخلاقی تانے بانے کو نقصان پہنچ رہا تھا۔

1999 میں اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد جنرل مشرف نے جو پہلا کام کیا ان میں سے ایک قومی احتساب بیورو (نیب) کا قیام تھا۔ کم از کم شروع میں ان کا مقصد بدعنوانی سے لڑنا اور بدعنوان لوگوں کو ذمے دار ٹھہرانا تھا لیکن اقتدار کی کرسی پر رہنے میں ان کی بڑھتی ہوئی سیاسی دلچسپی نے حالات کو بدل دیا۔ معاملات شروع سے ہی غلط راستے پر چلے گئے۔ 2009 میں جنرل مشرف کے ذریعے وجود میں آنے والے این آر او نے آخرکار احتساب کا مذاق بنا دیا۔ تمام "جمہوری" حکومتوں نے نیب کو انتقام کے بجائے سیاسی انتقام کے لیے استعمال کیا۔ انتقام اورانصاف میں بڑا فرق ہے۔

انتقام ذاتی ہے؛ اس کا مقصد جرم کرنے والے شخص کو ذاتی طور پر نقصان پہنچانا ہے۔ دوسری طرف، انتقامی انصاف، فرد کے بجائے کسی جرم کی سزا کا نظریہ ہے اور جرم کے جواب میں سزا جرم کے متناسب ہونی چاہیے اور تمام مجرموں کو قانون کے سامنے برابر ہونا چاہیے۔

اس طرح انتقام کا مقصد فرد پر نہیں بلکہ جرم پر ہے۔ یہ جرم سے ہونے والے نقصان کو پورا کرنے اور اسے دوبارہ ہونے سے روکنے کی کوشش ہے۔ دونوں غلط کاموں کی سزا ہیں۔ نیب کو اس وقت حکومتیں سیاسی کھینچا تانی حاصل کرنے اور سیاسی یا ذاتی مخالفین کو سزا دینے کے لیے استعمال کریں۔

صرف سیاسی مخالفین ہی نیب کے دائرہ کار میں آتے ہیں جب کہ پارٹی سیاست کے "دائیں جانب" مجرموں کو بچایا جاتا ہے۔ عمران خان کی حکومت نے سب سے پہلے اس روایت کو توڑنے کی کوشش کی۔ ایک جرات مندانہ قدم میں انھوں نے محسوس کیا کہ اگر پاکستان ایمانداری کے ساتھ بدعنوانی سے لڑنا چاہتا ہے تو اسے پوری طرح سے لڑنا ہوگا۔

نتیجے کے طور پر، انھوں نے ان مجرموں کو مساوات سے نکالنے سے انکار کر دیا جو نہ صرف ان کی پارٹی کے رکن تھے بلکہ ذاتی دوست بھی تھے۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ پاکستانی معاشرہ اس کے لیے تیار نظر نہیں آتا۔ حتیٰ کہ ان کی اپنی پارٹی کے ارکان بھی اس خیال کو نہ سمجھ سکے اور کسی بھی غلط کام کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا جس نے آخر میں پارٹی کو برا جھٹکا دیا اور عمران خان کی حکومت گرادی۔ امید ہے کہ عمران خان اور پی ٹی آئی اس جھٹکے سے بچ جائیں گے اور انتقام کے بجائے انصاف پر اصرار نہیں چھوڑیں گے۔ پاکستان میں جمہوریت کو چلانے کی کئی دہائیوں کی کوششوں کے بعد بھی اس کے بنیادی اجزاء ابھی تک غائب ہیں۔ ایک بڑی وجہ قانون کے سامنے تمام پاکستانی شہریوں کی برابری کا نظریہ نہ ہونا ہے۔

زیادہ تر لوگ سمجھتے ہیں کہ وہ اتنے خاص ہیں کہ ان پر قانون کا اطلاق نہیں ہو سکتا۔ یہ ٹریفک قوانین سے شروع ہوتا ہے اور آئین پر ختم ہوتا ہے، جو ملک کا سب سے بڑا قانون ہے۔ پھر وہ یہ بھی جانتے ہیں کہ قوانین اکثر لاگو نہیں ہوتے اس لیے وہ اس سے پھسلنے پر ہی اعتماد کرتے ہیں۔

دوسری بات یہ ہے کہ ذاتی مفاد اور قومی مفاد کے درمیان فرق کو سمجھنے یا قبول کرنے کا فقدان ہے۔ پارلیمنٹ کے ارکان کا مقصد ملک کے قومی مفاد کو فروغ دینا ہے، خاص طور پر معاشرے کے چھوٹے سے بڑے اور غریب طبقے کی نہیں، سب کی بھلائی کو فروغ دینا ہے۔ پارلیمنٹ میں پاس ہونے کے لیے جو بھی بل پیش کیا جائے اس میں معاشرے کی بہتری کو مدنظر رکھنا ہوتا ہے، ایم این اے کو اپنے ذاتی یا اپنے خاندان کے کاروباری مفاد کا خیال نہیں رکھنا چاہیے۔

کوئی بھی قانون کو ووٹ دیتا ہے اگر یہ ملک کے مفاد میں ہو تو ٹھیک ورنہ اس سے آپ کے ذاتی مفاد کو نقصان پہنچے گا۔ انتظامیہ اور دیگر ریاستی اداروں میں فیصلہ سازی پر بھی یہی لاگو ہوتا ہے اور ایسے فیصلے نہیں کرنا چاہیے جس سے ملک کو نقصان پہنچائے۔ قومی مفاد کیا ہے اور یہ ذاتی مفاد سے کس طرح مختلف ہے کے بارے میں عوامی مباحثے شاید ہی کبھی منعقد کیے گئے ہوں۔ اس کے بعد اس اہم پہلو کے بارے میں آگاہی کم ہے۔

برصغیر میں ایک اور خاصیت برطانوی راج کی وراثت ہے۔ انگریزوں کے خلاف آزادی کی تحریک کے دوران جیل جانا قربانی کا جذبہ حاصل کر چکا تھا۔ اگرچہ نوآبادیاتی راج سے آزادی کے لیے لڑتے ہوئے یقیناً ایسا ہی ہوا تھا، لیکن بدعنوانی کے لیے جیل جانا آج تک اسی طرح سمجھا جاتا ہے۔ بدعنوانی کے مقدمات زیر التوا سیاست دان ملک پر حکومت کرنے کے لیے اتنے موزوں ہیں کہ بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ طاقتور اور مقبول سیاستدانوں کو سزا نہیں ہونی چاہیے اور انھیں جیل نہیں جانا چاہیے کیونکہ اس سے ان کی مقبولیت میں مزید اضافہ ہو گا۔

بدعنوانی سے لڑنا اور بدلہ لینا ایسے پیچیدہ کام ہیں جس میں تمام معاشرہ شامل ہے، اپنے بارے میں تنقیدی جائزہ لینے اور ایک پرعزم اور قابل اعتماد قیادت کا مطالبہ کرتا ہے۔ بے شک، اگر آپ سخت گیر مجرموں کو ان عہدوں پر بٹھاتے ہیں جن کا مقصد انصاف کے نام پر قانون کی بالادستی اور کام کرنا ہوتا ہے تو انصاف جرم بن جاتا ہے! احتساب کے منصفانہ عمل کے بغیر پاکستان ترقی نہیں کر سکتا اور اپنے تمام شہریوں کو انصاف فراہم نہیں کر سکتا۔

(فاضل کالم نگار دفاعی اور سیکیورٹی امور کے تجزیہ کار اور کراچی کونسل فار ریلیشنز (KCFR) کے چیئرمین ہیں۔)

About Ikram Sehgal

Major (R) Ikram Sehgal is a leading Pakistani defence analyst and security expert. He is a retired Pakistan Army officer.

Check Also

Haji Sahib Vaccinevi

By Mahmood Fiaz