Thursday, 23 September 2021
  1.  Home/
  2. Nusrat Javed/
  3. Lahore Jalsa Mein Kitne Bande Thay?

Lahore Jalsa Mein Kitne Bande Thay?

اندھی نفرت وعقیدت کے موسم میں "صحافت" نام تھا جس کا " عرصہ ہوا ہمارے ہاں سے ہی نہیں دُنیا بھر کے میڈیا کے "گھرسے" جاچکی ہے۔ 2016کا انتخاب جیتنے کے بعد ٹرمپ نے امریکی صدر کے عہدے کا حلف اٹھایا تو ایک ٹویٹ لکھ کر بڑھک لگادی کہ اس کی حلف برداری کا "جشن" منانے امریکی عوام کی ایک ریکارڈ ساز تعداد وائٹ ہائوس کے باہر جمع ہوگئی تھی۔ اس کے مخالف ٹی وی اداروں نے بے تحاشہ میڈیا فوٹیج دکھاتے ہوئے اصرار کیا کہ مذکورہ دن فقط "چند ہزار لوگ" ہی نظر آئے تھے۔ ٹرمپ اور اس کے حامی مگر "ریکارڈ بنانے"پر مصر رہے۔ Liveشوز میں جب مختلف اینکروں نے ماضی کی فوٹیج دکھاتے ہوئے امریکی صدر کے ترجمانوں کو دیوار سے لگانا چاہا تو Alternate Factsکی ترکیب ایجاد ہوگئی۔"حقیقت"اپنی جگہ کوئی معروضی شے نہ رہی۔"حقائق"کے "متبادل حقائق" دریافت ہوگئے۔

"حقائق" کا بے دریغ انداز میں اپنی پسند کا بیانیہ فروغ دینے کے لئے PDMکے اتوار کے دن لاہور میں ہوئے جلسے کی بابت "رپورٹنگ" کے دوران بھی احمقانہ استعمال ہوا ہے۔ ٹی وی سکرینوں پر چھائے "ذہن سازوں " کے اس ضمن میں "تجزیے" سنتے ہوئے میں اپنی "صحافت" کے بارے میں واقعتا پریشان ہوگیا۔ کئی مرتبہ اس پیشے کو تقریباََ جنونی انداز میں اختیار کرنے کے بارے میں شرمساری کا احساس ہوا۔ بنیادی Spinیا جھگڑا "کتنے لوگ تھے؟ " والے سوال سے جڑا ہوا تھا۔ نواز شریف کے جن "حامیوں " کو اس دور میں بھی آزاد میڈیا میں رونمائی کی اجازت میسر ہے وہ مینارِ پاکستان کے احاطے میں "ریکارڈ ساز" تعداد جمع ہونے کا دعویٰ کرتے رہے۔ حکومتی مخالفین کی نگاہ "چھ ہزار" سے زیادہ لوگ دیکھ نہیں پائی۔ "غیر جانب دارصحافیوں " نے لاہور والے جلسے کا مقابلہ عمران خان کے اکتوبر 2011والے جلسے سے کرنا شروع کردیا۔ ایسے ساتھیوں کی ایک مؤثر تعداد حال ہی میں اسی مقام پر خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ کے لئے جمع ہوئے ہجوم کا حوالہ بھی دیتی رہی۔

ایک حوالے سے واجب پوائنٹ یہ بھی رہا کہ اتوار کے روز جمع ہوئے ہجوم کی تعداد کا جائزہ لیتے ہوئے یہ حقیقت فراموش نہیں کی جاسکتی کہ عمران خان کے 2011میں اس مقام پر ہوئے جلسے میں موجود شرکاء کا مقابلہ حاضرین کی اس تعداد سے ہونا چاہیے جو "گیارہ سیاسی جماعتیں " مل کر دکھانا چاہ رہی تھیں۔ اس تناظر کو اجاگر کرتے ہوئے "Poor Show"کی داستان بنانا مزید آسان ہوگیا۔ میں جماندرو لاہوری ہوں۔ میرے مرحوم والد کو سیاسی جلسوں میں شرکت کا جنون لاحق تھا۔ ہمیشہ مجھے اپنے ساتھ لے جاتے۔ ان دنوں لاہور میں "تاریخ ساز" جلسے فقط موچی دروازے کے باہر والے باغ میں ہوا کرتے تھے۔ مادرِ ملت نے1964کے صدارتی انتخاب کے دوران مال روڈکے آغاز میں واقعہ ناصر باغ میں ہجوم جمع کرنے کی روایت متعارف کروائی۔ بعدازاں ذوالفقار علی بھٹو بھی اسی باغ کو بھرتے ہوئے اپنی مقبولیت ثابت کرتے رہے۔ اپریل 1986میں لیکن ان کی دُختر طویل جلاوطنی کے بعد وطن لوٹیں تو مینارِ پاکستان کے چمن میں ایک تاریخ ساز ہجوم دکھایا۔ عمران خان صاحب نے اکتوبر 2011میں ان کے بنائے "ریکارڈ" کو توڑنے کی کوشش کی۔ میری بدقسمتی یہ رہی کہ موچی دروازہ، ناصر باغ اور مینارِ پاکستان کے بیشتر جلسوں کا بذاتِ خود شرکت سے مشاہدہ کیا ہے۔

اپنے تجربے سے Eye Countکی جو صلاحیت حاصل کی ہے اسے بروئے کار لائوں تو PDMکے لاہور والے جلسے کو "ناکام" ثابت کرنا کم از کم میرے لئے ممکن نہیں۔ اس جلسے کے انعقادسے ایک روز قبل ہفتے کی سہ پہر اور رات کے ڈیڑھ بجے مینارِ پاکستان کے احاطے میں کافی وقت گزارہ تھا۔ وہاں کی گہماگہمی اور ہلچل ایک بھرپور Momentumکا عندیہ دیتی نظر آئی۔ یہ Momentumقطعاََ حیران کن نہیں تھا۔ PDMکے حال ہی میں پاکستان کے دوسرے شہروں میں ہوئے جلسوں کے برعکس مینارِ پاکستان والے جلسے کو "روکنے" کے لئے مقامی پولیس اور انتظامیہ ہرگز متحرک نظر نہیں آئی۔ ریاستی مزاحمت کے بغیر نواز شریف کے حامیوں کے لئے "اپنے شہر" میں متاثر کن تعداد جمع کرنا جوئے شیر لانے کے ہرگز مترادف نہیں تھا۔ وہ اس ضمن میں "ناکام" نہیں ہوئے۔

"کتنے لوگ تھے؟ " والے سوال کا معروضی اور ٹھوس جواب حاصل کرنے کے لئے لازمی ہے کہ اس "رقبے" کو طے کرلیا جائے جو مینارِ پاکستان کے احاطے میں لوگوں کو جمع کرنے کے لئے باقی بچا ہے۔ ماضی کا منٹو پارک جہاں مینارِ پاکستان 1960کی دہائی میں تعمیر ہونا شروع ہوا ایک وسیع وعریض باغ ہوا کرتا تھا۔ بتدریج اس کے بیشتر حصے کو لوہے سے بنائے جنگلوں اور کنکریٹ سے بنے "کارپارک"، کی نذر کردیا گیا ہے۔ کئی برسوں تک اس میدان میں فقط ایک "گیٹ" سے داخل ہوا جاتا تھا جو بادشاہی مسجد کے عین مقابل سڑک پار کرنے کے بعد  نظر آتا تھا۔ اب اس میدان میں داخلے کے چار سے زیادہ گیٹ ہیں۔ اس کے اِردگرد لگائے جنگلے کو پھلانگ کر اندر کودناتقریباََ ناممکن ہے۔ اتوار کے جلسے میں داخلہ صرف ایک ہی "گیٹ" سے ممکن تھا۔ "گیٹ نمبر3" کو VIPبناکر قائدین کی آمد کے لئے مختص کردیا گیا تھا۔ سردی اور کرونا کی دوسری لہر کے خوف کے باوجود حاضرین کی مؤثر تعداد مینارِ پاکستان کے احاطے میں عصر کے قریب جمع ہوچکی تھی۔ دوسرے شہروں سے آئے شرکاء کے حوالے سے مولانا فضل الرحمن کے کارکنوں نے نوازشریف کے حامیوں کو بچھاڑدیا۔ راوی کے کنارے سے مینارِ پاکستان کو لے جانے والی سڑک پر JUIکے جھنڈے والی بسوں کی طویل قطاریں موجود تھی۔ 15سے زیادہ منٹوں تک پیدل چلتے ہوئے مجھے فقط یہ قطار ہی نظر آ ئی۔ JUIکی بسیں صرف خیبرپختونخواہ کے شہروں ہی سے نہیں آئی تھیں۔ ایک بھاری تعداد بالائی سندھ کے شہروں، قصبات اور خاص طورپر شکار پور سے لاہور لائی گئی۔ JUIکے مقابلے میں دیگر جماعتیں ایسا اہتمام کرتی نظر نہیں آئیں۔

مسلم لیگ (نون) نے مجمع جمع کرنے کے لئے مقامی ایم این ایز اور ایم پی ایز پر انحصار کیا۔ وہ اپنے "حلقوں " سے لوگوں کو گاڑیوں اور ویگنوں میں بھر کر لائے۔ زیادہ تر شرکاء کا تعلق مگر لاہور کے قدمی محلوں سے تھا۔ وہ مینارِ پاکستان تک پہنچنے کے لئے پیدل سفر کو ترجیح دیتے رہے۔"کتنے لوگ تھے؟ " والے سوال کے مقابلے میں ذاتی طورپر میں اس Feelکو دریافت کرنا لازمی شمار کرتا ہوں جو کسی شہر میں ہوا جلسہ Projectکرتا ہے۔ اس تناظر میں اعتراف کرنا لازمی ہے کہ ابھی تک مینارِ پاکستان کے احاطے کو محترمہ بے نظیر بھٹو ہی نے اپریل 1986میں لاہور ایئرپورٹ سے بذریعہ مال روڈ اس مقام تک پہنچنے کے بعد واقعتا"بھر" دیا تھا۔ اس جلسے کا Dominantموڈ Excitementتھی جو محترمہ نے اپنی Presenceسے جنرل ضیاء کے جبرکے مقابلے میں اجاگر کی۔ عمران خان کے اکتوبر2011والے جلسے میں شرکاء کی تعداد مذکورہ جلسے سے میرے Eye Count کے مطابق ہر صورت آدھی تھی۔ اس جلسے نے مگر جوانی سے وابستہ بھرپور توانائی یا Energyکو موسیقی اور Event Managementکے جدید ترین ذرائع کے استعمال سے خیرہ کن انداز میں اجاگر کیا تھا۔

PDMکے لاہور والے جلسے کی اجتماعی Feelان دو جلسوں کے مقابلے میں ایک میلے جیسی تھی۔ موڈ جارحانہ نہیں Festiveتھا۔ اتوار کے دن آخری پھیرا میں نے مینارِ پاکستان کے گرد شام ساڑھے چھ بجے کے بعد لگانا شروع کیا۔ گاڑی کو شاہی قلعے کی دوازے کے ساتھ بنائے "روشنائی گیٹ" کے قریب کھڑا کیا اور مینارِ پاکستان کے احاطے کے گرد دائرے میں ایک گھنٹے سے زیادہ پیدل سفر کرتا رہا۔ کرونا کے خوف سے مینارِ پاکستان کے اندر داخل نہیں ہوا۔ ماسک لگانے کے باوجود مجھے احاطے کے باہر موجود کئی افراد نے پہچان کر سیلفیاں بنانے کو مجبور کیا۔ ان کی "محبت" نے مزید پریشان کردیا۔ دائرے میں ایک گھنٹے سے زیادہ "پیدل مارچ" اس امر کی گواہی دے رہا تھا۔ اتوار کے دن مینارِ پاکستان کے گرد ایک متاثر کن ہجوم جمع ہوگیا تھا۔ پھل اور چٹ پٹی چیزیں فروخت کرنے والوں نے بھرپور" سیزن "لگایا۔ حتیٰ کہ وہاں لوگ "صدقے" کے لئے بکرے بھی بیچتے نظر آئے۔ میرے ذاتی مشاہدے کے مطابق اہم ترین بات یہ تھی کہ شام سات بجے کے بعد اندرون شہر کے نوجوانوں کی کئی ٹولیاں مسلم لیگ نون کے جھنڈے لہراتے ہوئے اس جلسے میں داخل ہورہی تھیں۔

دیگر جماعتوں کے کارکن جبکہ گھروں کو لوٹنا شروع ہوگئے تھے۔"تازہ ٹولیوں" نے واضح الفاظ میں پیغام دیا کہ وہ صرف نواز شریف کا ممکنہ خطاب جلسے میں بیٹھ کر براہِ راست سننے کے خواہاں ہیں۔ انہیں یقین تھا کہ اس خطاب کو ٹی وی پر دکھانے کی اجازت نہیں ملے گی۔ سوشل میڈیا پر انحصار "مزا" نہیں دیتا۔ ان تازہ دم ٹولیوں کی تعداد ہمارے عوام کے ایک مؤثر حلقے کے لئے نواز شریف کے "بیانیے" کی قوت اجاگر کررہی تھی اور اس حقیقت کو عیاں بھی کہ ہمارا میڈیا کتنا "آزاداور بے باک" ہے۔

About Nusrat Javed

Nusrat Javed, is a Pakistani columnist, journalist and news anchor. He also writes columns in Urdu for Express News, Nawa e Waqt and in English for The Express Tribune.

Check Also

Kalay Chawlon Ki Chamak

By Ibn e Fazil