Thursday, 20 June 2024
  1.  Home
  2. Blog
  3. Syed Waqar Azeem
  4. PTI Ki Alamti Giraftarian

PTI Ki Alamti Giraftarian

پی ٹی آئی کی علامتی گرفتاریاں

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما عمران خان حال ہی میں حزب اختلاف کی جماعتوں کی زیر قیادت جاری "جیل بھرو" تحریک کی وجہ سے خبروں میں ہیں۔ اس تحریک کا مقصد حکومت پر منصفانہ اور شفاف انتخابات کے انعقاد، سیاسی قیدیوں کی رہائی اور عدلیہ کی آزادی کو یقینی بنانے کے لیے دباؤ ڈالنا ہے۔

تاہم، حالیہ پیش رفت سے پتہ چلتا ہے کہ عمران خان اور ان کی حکومت کو جیل بھرو تحریک کے کچھ رہنماؤں کی علامتی گرفتاریوں کے ذریعے فیس سیونگ دیا جا رہا ہے۔ جیل بھرو تحریک کی علامتی گرفتاریوں سے پی ٹی آئی کے رہنما عمران خان کو وہ پذیرائی نہیں مل رہی جسکی خان صاحب آس لگائے بیٹھے تھے۔ گرفتاریوں کو حکومت کی طرف سے ایک مذاق قرار دیا جا رہا ہے کہ جیل بھرو سے "ضمانت دو" تحریک بن گئی ہے، اور مبصرین کا بھی یہ کہنا ہے کہ یہ تحریک بھی موجودہ معاشی بحران میں جلد دم توڑ جائے گی۔

پی ٹی آئی موجودہ حکومت پر اپوزیشن جماعتوں، صحافیوں اور سول سوسائٹی کی تنظیموں کو دھمکانے اور ہراساں کرنے کے لیے ریاستی وسائل کا استعمال کرنے کا الزام لگا رہی ہے اور حکومت کے اس اقدام کو بہت سے لوگوں کی جانب سے اختلاف رائے کو دبانے اور اپوزیشن کی آزادی اظہار کو روکنے کی کوشش کے طور پر تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ اس سے پاکستان میں جمہوریت اور انسانی حقوق کی حالت کے بارے میں شدید تحفظات پیدا ہوئے ہیں۔

عمران خان، جو 2018 میں"نئے پاکستان" کے قیام کے وعدے کے ساتھ برسر اقتدار آئے تھے، انہیں خود معیشت، خارجہ پالیسی اور انسانی حقوق کے مسائل سے نمٹنے کے لیے تنقید کا سامنا ہے۔ خان صاحب کی ماضی کی حکومت پر حزب اختلاف کی جماعتوں سے نمٹنے، نیب کا غلط استعمال کرنے اور ناقدین کو خاموش کرنے کے لیے دیگر ریاستی اداروں کا استعمال کرنے کا الزام لگایا گیا تھا۔

جیل بھرو تحریک، پی ڈی ایم حکومت کے لیے ایک بڑا کانٹا بن سکتی تھی۔ اس تحریک نے اپوزیشن جماعتوں اور سول سوسائٹی کی تنظیموں کو انتخابی عمل میں احتساب اور شفافیت کا مطالبہ کرنے کے لیے متحرک کرنا تھا۔ لیکن پی ٹی آئی کے چند رہنماؤں کی علامتی گرفتاریوں سے حکومت وقت کے حوصلے پست ہونے یا ملک میں بامعنی تبدیلی لانے کا کوئی امکان نظر نہیں آتا۔

آخر میں، عمران خان کو خود گرفتاری دینی ہوگی اگر اس تحریک کو زندہ رکھنا ہے۔ ورنہ ماضی کی طرح یہ تحریک بھی شروع ہوتے ہی دم توڑ دے گی۔ جیل بھرو تحریک پی ٹی آئی کے کچھ رہنماؤں کی علامتی گرفتاریوں کو فیس سیونگ کے علاوہ اور کارکنوں کے وقت کا ضیاع سمجھا جا رہا ہے۔ حکومت کو جمہوریت میں متحرک اپوزیشن اور آزاد پریس کی اہمیت کو تسلیم کرنا چاہیے اور ایسی اقدار کو فروغ دینے والا ماحول پیدا کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے۔ تب ہی پاکستان صحیح معنوں میں ایک "نیا پاکستان" بن سکتا ہے جس کا وعدہ عمران خان نے اپنی انتخابی مہم کے دوران کیا تھا۔

Check Also

Blood Activism, Samaji Khidmat Ka Dil

By Asif Ali Yaqubi