Thursday, 18 April 2024
  1.  Home/
  2. Blog/
  3. Syed Waqar Azeem/
  4. Pakistan Mein Jadeed Zaraat

Pakistan Mein Jadeed Zaraat

پاکستان میں جدید زراعت

زراعت کئی دہائیوں سے پاکستان کی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے، جو ملک کے جی ڈی پی میں اہم کردار ادا کرتی ہے اور لوگوں کی ایک بڑی تعداد کو روزگار فراہم کرتی ہے۔ تاہم، یہ تیزی سے واضح ہوتا جا رہا ہے کہ روایتی زراعت کے طریقے طویل مدت میں پائیدار نہیں ہو سکتے۔ پاکستان میں زراعت کے جدید طریقوں کی ضرورت اب پہلے سے کہیں زیادہ اہم ہے۔

ان کی بہترین کوششوں کے باوجود، پاکستان میں روایتی کسان اپنی ضروریات پوری کرنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔ وہ ایسی فصلیں کاشت کرتے ہیں جن کی مارکیٹ ویلیو کم ہوتی ہے اور ان کے اخراجات اکثر ان کے منافع سے زیادہ ہوتے ہیں۔ اس نے بہت سے کسانوں کے لیے قرض، غربت اور مایوسی کا ایک شیطانی چکر شروع کر دیا ہے۔ یہ واضح ہے کہ کچھ تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

اس کا حل جدید زرعی طریقوں میں مضمر ہے۔ ان طریقوں میں فصل کی پیداوار کو بہتر بنانے، لاگت کو کم کرنے اور منافع میں اضافہ کرنے کے لیے جدید ٹیکنالوجی، سائنسی تحقیق اور ڈیٹا کا تجزیہ شامل ہے۔ ترقی پسند کسان جو جدید زرعی طریقوں کو اپناتے ہیں وہ پہلے سے ہی فوائد حاصل کر رہے ہیں، منافع بخش فصلوں کی کاشت کر رہے ہیں جنہیں ایک پریمیم قیمت پر فروخت کیا جا سکتا ہے۔

تاہم، جدید زرعی طریقوں کی طرف منتقلی آسان نہیں ہے۔ اس کے لیے ٹیکنالوجی، تربیت اور بنیادی ڈھانچے میں نمایاں سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔ بہت سے روایتی کسان ان اخراجات کو برداشت نہیں کر سکتے، یہی وجہ ہے کہ وہ اپنے محدود منافع کے باوجود روایتی طریقے استعمال کرتے رہتے ہیں۔

اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے حکومت اور نجی شعبے کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے تاکہ وہ کسانوں کو مالی مدد، تربیت اور مدد فراہم کریں جو جدید زرعی طریقوں کو اپنانے کے لیے تیار ہیں۔ اس میں جدید آلات، کھاد، کیڑے مار ادویات اور ہائی برڈ بیج تک رسائی فراہم کرنا شامل ہے جو فصل کی پیداوار کو بڑھانے میں مدد کر سکتے ہیں۔

اس کے علاوہ، نئی اور اختراعی زرعی ٹیکنالوجیز بنانے کے لیے تحقیق اور ترقی میں سرمایہ کاری کرنا ضروری ہے جو کسانوں کو فائدہ پہنچا سکے۔ اس میں خشک سالی کے خلاف مزاحم فصلوں کی تیاری، مٹی کی صحت کو بہتر بنانا، اور زیادہ موثر آبپاشی کے نظام کی تشکیل شامل ہے۔

جدید زرعی تحقیق اور ترقی کی طرف وسائل کو ری ڈائریکٹ کرنے کے لیے دفاتر کو بند کرنا اور زراعت کی روایتی ملازمتوں کی تعداد کو کم کرنا ضروری ہو سکتا ہے۔ تاہم، یہ یقینی بنانا بہت ضروری ہے کہ یہ کارکن پیچھے نہ رہیں۔ حکومت اور نجی شعبے کو ان کارکنوں کو متبادل روزگار کے مواقع، تربیت، اور مالی مدد فراہم کرنی چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ وہ اپنا اور اپنے خاندان کو سنبھال سکیں۔

آخر میں، پاکستان میں زراعت کے جدید طریقوں کی اشد ضرورت ہے۔ صرف ترقی پسند کسان جو ان طریقوں کو اپناتے ہیں وہ منافع بخش فصلیں کاشت کر سکتے ہیں اور اپنی روزی روٹی برقرار رکھ سکتے ہیں۔ حکومت اور نجی شعبے کو ضروری وسائل اور مدد فراہم کرنے کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ یہ منتقلی کامیابی سے ہو سکتی ہے۔ ایسا کرنے سے، پاکستان اپنے زرعی شعبے اور اپنے لوگوں کے لیے ایک زیادہ پائیدار اور خوشحال مستقبل بنا سکتا ہے۔

Check Also

Civil War

By Mubashir Ali Zaidi