Monday, 03 October 2022
  1.  Home/
  2. Blog/
  3. Khurram Masood

All India Muslim League Ka Qayam Aur Balochistan Ki Tehreek e Pakistan Ke Liye Jad o Jehad (1)

برصغیر کے مسلمانوں کی طویل جدوجہد کی بدولت پاکستان وجود میں آیا، ایک معجزہ اور الله کا انعام ہے تمام صوبوں کی عوام نے تحریک پاکستان کو مقبول بنانے میں حصہ لیا، مسلم رہنماوں نےبرصغیر کے کونے کونے تک پاکستان کا پیغام پہنچایا اور ہندوں اور گوروں کی سازش کو ناکام بنایا۔ بھارت کی ہندو اکثریت کا ایک طبقہ مسلمانوں کو خود سے کم تر جانتا تھا۔

مسلمانوں نے ان پر چونکہ کئی سو سال حکومت کی تھی۔ اس لیے وہ مسلمانوں سے بدلہ لینا چاہتے۔ ان حالات میں دیکھتے ہوئے مسلمانوں نے اپنے لیے ایک الگ سیاسی جماعت کی ضرورت محسوس کی اور تحریک پاکستان کو تکمیل تک پہنچانے کیلئے آل انڈیا کا قیام 1906 میں ہوا اور یہ جماعت پاکستان کی بانی سیاسی جماعت ہے۔ اس کے اغراض و مقاصد میں آزاد جمہوری ریاستوں کے ایک فیڈریشن کی شکل میں ہندوستان میں مکمل۔

آزادی کا قیام جس میں مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کے حقوق اور مفادات کا آئین میں مناسب اور مؤثر طریقے سے تحفظ کیا گیا ہے۔ ہندوستانی مسلمانوں کے سیاسی، مذہبی اور دیگر حقوق اور مفادات کا تحفظ اور آگے بڑہنا مسلمانوں اور ہندوستان کی دیگر برادریوں کے درمیان دوستانہ تعلقات اور اتحاد کو فروغ دینا تھا، ہندوستان کے مسلمانوں اور دوسرے ممالک کے مسلمانوں کے درمیان برادرانہ تعلقات کو برقرار اور مضبوط کرنا تھا۔

جہاں دیگر صوبوں نے تحریک پاکستان میں اپنا کردار ادا کیا وہیں، بلوچستان نے بھی تحریک پاکستان سے تکمیل پاکستان تک بلوچستان کا کردار شاندار اور اہم رہا ہے۔ اور بغیر کسی لالچ اور دباو کے پاکستان سے الحاق کیا ہندوستان کی سیاست میں بلوچستان کو اہمیت اس وقت ملی جب لیگ نے بلوچستان کو صوبائی حیثیت دینے اور اس عرصے کے دوران قانونی اصلاحات متعارف کرانے کا مطالبہ کیا۔

قائداعظم اور قاضی عیسیٰ کی سیاسی جدوجہد سے سیاسی منظر نامے پر اس وقت نمودار ہوئی، جب قاضی عیسیٰ نے نواب طلحہ محمد خان پیلن پوری کے ذریعے بمبئی ریس کورس میں قائد سے ملاقات کی اور قائد نے قاضی سے بلوچستان میں مسلم لیگ کے وجود کے بارے میں پوچھا تو قائد نے قاضی سے کہا کہ وہ بلوچستان میں لیگ کے قیام کے لیے کام کریں۔

قاضی صاحب اور ان کے ساتھیوں کی جدوجہد سے لیگ کو عوام کی طرف سے پذیرائی ملی اور بہت جلد علاقے کی پہلی جماعت بن گئی، مسلم لیگ ہمیشہ بلوچستان کے آزادی پسندوں کے دل اور خون میں تھی۔ بلوچستان کے لوگ آزادی پسند ہیں۔ انہوں نے کبھی بھی برطانوی حاکمیت کو تسلیم نہیں کیا، بلوچستان میں سیاسی آزادیوں کی صورت حال بہت مختلف تھی اور لوگ اخبارات تک بھی نہیں پہنچ سکتے تھے۔

نوابزادہ یوسف عزیز مگسی نے ایک مضمون لکھا، جس سے ریاست قلات کے وزیر اعظم سر شمس شاہ بہت ناراض ہوئے اور مگسی کی گرفتاری کے وارنٹ جاری کر دئیے۔ اسے گرفتار کر کے ایک سال قید اور بھاری جرمانہ کیا یہ وہ دور تھا۔ جب سیاسی جماعتیں، سیاسی جلسے، جلوس اور اخبارات روزمرہ کی زندگی کا معمول بن چکے تھے۔ انجمن اتحاد بلوچ کا قیام یہاں کی رسمی سیاسی سرگرمیوں کا نقطہ آغاز تھا۔

اس تنظیم کے قیام نے اس علاقے میں تحریک آزادی کو ایک فورم فراہم کیا۔ 20 نومبر کو انجمن نے شمس شاہ کے ہاتھوں بلوچوں کے مصائب، رنج و الم کا اظہار کرنے کے لیے "شمس گردی" کے نام سے ایک پمفلٹ شائع کیا۔ جس کے اہم نکات کچھ یوں تھے، شمس شاہ بلوچوں کی خواہشات کو نظر انداز کر رہا تھا، اس لیے برطانوی حکومت کو اس کا سنجیدگی سے نوٹس لینا چاہیے اور بنیادی حقوق فراہم کیے جائیں۔

پرنس آف قلات کو بلوچوں کی خواہشات کے مطابق منتخب اور نامزد کیا جائے، قلات کے حکمران کو ایک آئینی حکومت بنانا چاہیے اور آئینی ڈھانچہ تشکیل دینا چاہیے، بلوچستان کی سیاسی تاریخ میں یہ اپنے حقوق اور اپنی حکومت کا پہلا باضابطہ عوامی مطالبہ تھا۔ جیکب آباد میں آل انڈیا بلوچ کانفرنس سیاسی بیداری اور حقوق کے مطالبے کی جانب ایک اور تاریخی پیش رفت ہے۔

اس کانفرنس کی صدارت میر علی نواز خان آف خیر پور نے کرنی تھی۔ لیکن وہ اپنی علالت کی وجہ سے نہ کر سکے اور ان کا خطاب ان کے پرائیویٹ سیکرٹری نے پڑھ کر سنایا اور خان عبدالصمد خان اچکزئی کو متفقہ طور پر اس کانفرنس کی صدارت کے لیے منتخب کیا گیا۔ صمد خان کے عنوان کی تجویز پر "آل انڈیا بلوچ کانفرنس" کی جگہ بلوچستان اور آل انڈیا بلوچ کانفرنس رکھ دی گئی۔

اس کانفرنس کو کافی پذیرائی ملی اور مسلمانوں کے نمائندوں نے اس میں بھر پور شرکت کی۔ جس میں انجمن اتحاد بلوچان، بلوچستان، سندھ، انجمن انیسان مکران، بلوچستان کی مقامی انجمنیں، جمعیت العلماء سندھ، مجلس احرار اسلام، کے وفود شامل تھے۔ انجمنِ مجاہدینِ اسلام، جیکب آباد، انجمنِ اسلامیہ، شکارپور اور بہت سی دوسری انجمنیں۔

بلوچستان کی سیاست میں کچھ اور سیاسی پیش رفت اس وقت ہوئی، جب میر احمد یار خان نے میر محمد اعظم اور میر یوسف علی خان مگسی کی جگہ لی، اپنے بڑے بھائی سردار گل محمد خان زیب کی جگہ لے کر اپنے قبیلے کے سردار بن گئے۔ اس وقت مگسی نے ریاستی کونسل کے سامنے ذمہ داری کے قیام کی تجویز پیش کی مگسی نے اپنی جدوجہد جاری رکھی اور اخبار شروع کرنے لاہور چلے گئے۔

جس سے تحریک آزادی کو نئی تحریک دی اور مطالبہ کیا کہ ریاست قلات میں ایک منتخب اسمبلی اور ذمہ دار حکومت قائم کی جائے۔ بی بولان، کوئٹہ، نوشکی اور نصیر آباد کو بھی ریاست قلات میں شامل کیا جائے۔ ، لسبیلہ، خاران، مری، بگٹی اور چاغیش کو واپس قلات کو دیا جائے۔ ان مطالبات نے بلوچستان کی سیاست اور تحریک آزادی کو ایک نئی لہر دی۔

اس کے نتیجے میں عزیز کرد کی گرفتاری ہوئی، اور جنوری 1934 میں سبی میں شاہی جرگہ کی طرف سے مقدمہ چلایا گیا اور اسے تین سال قید کی سزا سنائی گئی، صمد خان پر مقدمہ چلا اور انہیں پانچ سال قید کی سزا سنائی گئی۔ دہلی کی تجاویز، سر محمد شفیع کی تجاویز اور قائد کے چودہ نکاتی فارمولے کی دستاویزات، یہ تمام دستاویزات قائد کے بلوچستان کے عوام کے تحفظات اور مفادات کی واضح عکاسی کرتی۔

دوسری طرف قائداعظم بلوچستان کے عوام کے حقوق کے بہت بڑے حامی تھے۔ انہوں نے بلوچستان میں مسلم لیگ کے قیام سے بہت پہلے بلوچستان کے حقوق کے تحفظ کے لیے آواز بلند کی۔ بلوچستان کو ریاست کا درجہ دیا جائے اور بلوچستان میں بھی بھارت کے دیگر صوبوں کی طرح قوانین کا نفاذ کیا جائے، یہ اس لیے تھا کہ قائد بلوچستان کی ترقی چاہتے تھے۔

یہ اس بات کی بھی عکاسی کرتا ہے کہ آل انڈیا مسلم لیگ نے بلوچستان کے حقوق میں شامل ہونے کا اعزاز۔ قائد بلوچستان میں عملی دلچسپی لے رہے تھے۔ انہوں نے غلام بھیک نورنگ پر زور دیا کہ وہ بلوچستان کی صوبائی خودمختاری کے حقوق کے لیے قرارداد کا مسودہ تیار کریں اور پیش کریں۔ قائداعظم، سر سکندر حیات اور فضل حق اور دیگر ممتاز لیگیوں نے بلوچستان میں مسلم لیگ کے قیام کے معاملے پر تبادلہ خیال کیا۔

Check Also

Roshni Jaisi Larkiyan

By Zaara Mazhar