Sunday, 08 December 2019

Hajj, Qurbani Aur Ayyam Tashreeq

10ذوالحجہ، حجاج اور تمام مسلمانوں کے لیے خصوصی اہمیت کا حامل ہے۔ اس دن حاجی میدان ِمنیٰ میںاور دنیا بھر کے مسلمان اپنے اپنے علاقوں میں قربانی کرتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے سابق امتوں پر بھی قربانی کو لازم کیا تھا اور واجب قرار دیا تھا کہ جانور ذبح کرتے وقت اللہ کا نام لیا جائے۔ قربانی کی تاریخ؛ اگرچہ بہت قدیم ہے، لیکن اسے اپنے کردار اور اعمال سے جس قدر روشن حضرت ابراہیم ؑ نے کیا، اس کی مثال ان سے پیشتر نہیں ملتی۔ بڑھاپے کے عالم میں اللہ تعالیٰ سے ایک صالح بیٹے کے لیے دعا مانگی تو اللہ تعالیٰ نے حضرت اسماعیل ؑ جیسا حلیم بیٹا عطا فرما دیا۔ بیٹا ابھی گود میں ہی تھا کہ اللہ کے حکم پر جناب ہاجرہ اور اسماعیل ؑ کو بے آب وگیاہ وادی میں تنہا چھوڑ دیا۔ اللہ تعالیٰ نے حضرت ہاجرہ اور جناب اسماعیل ؑ کیلئے چشمۂ زمزم رواں فرمایا اور اچھے رفقا اور ساتھی بھی عطا فرما دیے۔ جب اسماعیل ؑ چلنے پھرنے کے قابل ہو گئے تو سیّدنا ابراہیم ؑ نے خواب میں دیکھا کہ وہ جناب اسماعیل ؑ کے گلے پر چھری چلا رہے ہیں۔ انہوں نے اپنے بیٹے کو اپنے خواب سے آگاہ کیا تو حضرت اسماعیل ؑ نے پورے خلوص اور احترام سے کہا:اے میرے بابا !آپ وہ کریں، جس کا آپ کو حکم دیا گیا ہے۔ آپ مجھے صبر کرنے والوں میں سے پائیں گے۔ حضرت ابراہیم ؑ اور جناب اسماعیل ؑ نے جب کامل تابعداری کا ذہن بنا لیا تو جناب ابراہیم ؑ نے اسماعیل ؑ کو پیشانی کے بل لٹایا، جب آپ چھری چلانے لگے تو اللہ تعالیٰ نے آپ کو آواز دی کہ آپ نے اپنے خواب کو سچا کر دکھایا ہے اور اللہ تعالیٰ نے جناب اسماعیل ؑ کی جگہ جنت سے آنے والے جانوروں کو ذبح کروا دیا۔  

یوم النحر حضرت ابراہیم ؑ کی عظیم قربانی کی یاد گار ہے۔ حضرت رسول اللہﷺخود بھی قربانی کرتے رہے اور آپ نے اپنی امت کو بھی قربانی کرنے کی تلقین کی۔ نبی کریم رسول پاکﷺنے زندگی کے مختلف ادوار میں مختلف طرح کی قربانی کی۔ جب کشادگی ہوئی تو سو اونٹ بھی قربان کیے اور جب غربت کے ایام آئے تو دو مینڈھے بھی، اللہ تعالیٰ کی رضا کے حصول کے لیے ذبح کیے۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں واضح فرما دیا کہ اللہ تعالیٰ کو جانوروں کا گوشت اور خون نہیں پہنچتا، بلکہ اللہ تعالیٰ کو قربانی کرنے والے کا تقویٰ پہنچتا ہے، اس لیے جب بھی کوئی شخص قربانی کرنے کے لیے جانور کو لٹائے تو اس کو چھری صرف جانور کے گلے پر نہیں چلانی چاہیے، بلکہ یہ چھری جھوٹی امنگوں، غلط آرزوؤں اور سرکش خواہشات پر بھی چلنی چاہیے۔  

یوم النحرمیں اور بھی بہت سے کام کیے جاتے ہیں، جن میں جمرات کو کنکریاں مارنا، اپنے سرکے بالوں کو مونڈھنا اور طواف زیارت کرنا شامل ہے۔ ان کی مسنون ترتیب یہ ہے کہ پہلے جمرہ عقبہ کو کنکریاں ماری جائیں، اس کے بعد قربانی کی جائے، اس کے بعد حجامت کی جائے اور اس کے بعد طواف زیارت کیا جائے ؛ اگرچہ یوم النحر کو جمرہ عقبہ پر رمی کرنا، اس کے بعد قربانی، اس کے بعد حجامت اور طواف زیارت کرنا افضل ہے، لیکن؛ اگر کوئی غیر ارادی طور پر اس ترتیب کا اہتمام نہ کر سکے تو شریعت اس کا مواخذہ نہیں کرتی اس لیے کہ رسول اللہﷺ نے اس ترتیب پر سختی نہیں برتی۔  

یوم النحرکو ماری جانے والی کنکریوں کی وضاحت کچھ یوں ہے : جب حاجی مزدلفہ میں 9ذوالحجہ کی رات وقوف کرتا ہے تو اس کو وہاں سے چنے کے حجم کے برابر کی سات کنکریاں چن لینی چاہئیں۔ سنن نسائی میں حدیث ہے کہ حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول کریمﷺ اونٹنی پر سوار تھے۔ میں نے آپﷺکے لیے سات کنکریاں اکٹھی کیں، جنہیں دو انگلیوں کے درمیان رکھ کر پھینکا جا سکے۔ جب وہ کنکریاں آپؐ کے ہاتھ میں رکھ دیں تو آپ ؐنے فرمایا:ہاں ایسی ہی کنکریاں ٹھیک ہیں اور آپ ؐنے یہ بھی کہا کہ دین میں غلو کرنے سے بچو، تم سے پہلے لوگوں کو دین میں غلو نے ہی ہلاک کیاتھا۔ بیمار بوڑھوں اور بچوں کی طرف سے صحت مند نوجوان کنکریاں مار سکتے ہیں۔ کنکری جمرہ عقبہ کو نشانہ بنا کر مارنا چاہیے۔ جب تک رسول کریمﷺ نے جمرہ عقبہ کو کنکریاں نہیں مارنا شروع کیں۔ اس وقت تک آپ تلبیہ کہتے رہے اور جب کنکریاں مارنے کی باری آئی تو آپ نے ہر کنکری مارتے وقت اللہ اکبر کہا۔ اس رمی کا بنیادی مقصد بھی اللہ کا ذکر کرنا ہی ہے۔  

10ذوالحجہ کو طواف زیارت کرنے کے بعد حاجی پر احرام کے تمام پابندیاں ختم ہو جاتی ہیں۔ ایام تشریق 10ذوالحجہ کے بعد کے تین دن ہیں۔ ان ایام میں کم از کم دو دن منیٰ میں گزارنے ضروری ہیں اوربہتر ہے کہ تین دن ہی منیٰ میں گزارے جائیں؛ اگر، کوئی شخص کسی مجبوری کی وجہ سے 10ذوالحجہ کو طواف زیارت نہیں کر سکا تو وہ ایام تشریق میں بھی طواف زیارت کر سکتا ہے۔ طواف زیارت کے بعد حاجی کے لیے حج کی سعی کرنا بھی ضروری ہے اور اس کوصفا اور مروہ کی سعی اسی طرح مکمل کرنی چاہیے، جس طرح اس نے عمرے کی سعی کی تھی۔ طواف زیارت اور حج کی سعی کرنے کے بعد حاجی کے لیے منیٰ میں واپس آنا ضروری ہے ؛ اگر، کوئی خاص مجبوری ہو تو ایام تشریق کے دوران مکہ مکرمہ میں بھی قیام کیا جا سکتا ہے۔ مسلم شریف کی ایک روایت میں ایام تشریق کو کھانے پینے کے دن اور ایک روایت میں اللہ کا ذکر کرنے کے دن قرار دیا گیا ہے۔ ان ایام میں بیت اللہ شریف کا، جس حد تک ممکن ہو طواف کرنا چاہیے اور راتوں کو کثرت سے اللہ تعالیٰ کے ذکر اور یاد میں مشغول رہنا چاہیے۔ ان ایام میں حاجیوں اور عام مسلمانوں کے لیے روزہ رکھنا درست نہیں تاہم جو شخض حج تمتع کر چکا ہو اور اضافی عمرہ کرنے کے بعد وسائل کی تنگی کی وجہ سے قربانی کرنے سے قاصر ہو تو ایسے شخص کو ایام تشریق کے دوران تین روزے رکھنے چاہئیں اور اپنے وطن واپس آکر اس کو سات روزے مزید رکھنے چاہئیں۔ یہ دس روزے اس کی قربانی کا کفارہ بن جاتے ہیں۔  

عرفات، مزدلفہ اور منیٰ بنیادی طور پر کھلے میدان ہیں۔ ان میدانوں میں خیمہ زن حاجی مہاجروں اور مسافروں کی طرح کھلے آسمان کے نیچے قدرتی ماحول میں جب اپنے اللہ سے راز ونیاز کی باتیںکرتا ہے تو اس پر اپنی اور کائنات کی بے وقعتی پوری طرح واضح ہو جاتی ہے، اسی فطری ماحول میں حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اجرامِ سماویہ کی حقیقت کا تجزیہ کیا تھا اور ستارے، چاند اورسورج کو ڈوبتا ہوا دیکھ کر کہا تھا کہ میں اپنے چہرے کو اس ذات کی طرف موڑتا ہوں، جو زمین اور آسمان کا بنانے والا ہے اور آپ نے ہرچیزسے اپنے تعلق کو منقطع کر کے صرف خالق کل اور مالک کل سے اپنے تعلق کو استوار کر لیا تھا۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں اہل ایمان کی اس کیفیت کا ذکر کیا ہے کہ وہ اٹھتے بیٹھتے اور اپنے پہلوؤں پر اللہ کو یاد کرتے ہیں اور زمین و آسمان کی تخلیق پر غور کر کے یہ بات کہتے ہیں کہ اے ہمارے رب! آپ نے جو کچھ بھی بنایا ہے، باطل نہیں بنایا، آپ کی ذات پاک ہے۔ ہمیں آگ کے عذاب سے بچا لے۔  

ایام تشریق کے گزرنے پر حج کے جملہ ارکان مکمل ہو جاتے ہیں، لیکن اپنے وطن واپسی سے قبل ضروری ہوتا ہے کہ حاجی بیت اللہ شریف کا الوداعی طواف کرے ؛ البتہ حائضہ کو اس کی رخصت دی گئی ہے۔ طواف وداع حاجی کے لیے جہاں باعث اطمینان و سکون ہوتا ہے کہ وہ ارکانِ حج کو مکمل کر چکا ہے، وہیں طواف و داع اس کے لیے باعث تکلیف بھی ہوتا ہے کہ اللہ کے گھر سے جدائی کا وقت آن پہنچا ہے۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ جنہوں نے تیرے گھر کی زیارت نہیں کی، ان کو اپنے گھر کی زیارت کے شرف سے بہرہ ور فرما اور جن لوگوں نے زیارت کی ہے ان کو دوبارہ زیارت کرنے کی توفیق عطا فرما اور ہم تمام مسلمانوں کو ارکانِ اسلام کو سمجھنے اور ان پر عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرما! (آمین)