1.  Home/
  2. Syed Mehdi Bukhari/
  3. Ertugrul

Ertugrul

صاحبو! پروردگار کا بڑا کرم شامل رہا کہ سگی بیگم جو ملیں وہ نمازی پرہیزگار ہونے کے ساتھ ساتھ کٹر بریلوی عقیدت کی حامل بھی ہیں۔ اسی عقیدت کے زیرِ اثر ان کی خواہش تھی کہ وہ ترکی میں موجود پیروں کے درباروں پر حاضری دے پائیں۔ آج ان کی خواہش رنگ لے آئی اور ارظغرل ؒکے دربار عالیہ پر ان کی حاضری ہو گئی۔ اب ترکی میں بقیہ تین دربار بچے ہیں جن پر آنے والے دنوں میں حاضری ہو جائے گی۔ عثمان و اورحان ؒ اور مولانا روم ؒکے مزارات اب اُن کے پیشِ نظر ہیں۔

دوستو، بیگم کو ارطغرل ڈرامے سے بھی والہانہ عقیدت ہے۔ بیگم تو کبھی کبھی کسی سین کو دیکھتے روہانسی بھی ہو جاتی ہیں اور مجھ سے الجھ بھی پڑتی ہے۔ ایک بار تو ہلکی پھلکی نوک جھونک اس بات پر ہو گئی کہ "یہ دیکھیں وہ (ارطغرل) اپنی ہونے والی بیوی سے کیسی شاعرانہ گفتگو کر رہا ہے؟ اور آپ نے آج تک بیگم سے بھی اس قسم کا ایک جملہ نہیں بولا۔ یوں تو آپ لکھاری ہیں مگر بد ذوق لکھاری"ابھی اس غیر متوقع حملے کو اپنی ڈھال پر سنبھالنا ہی چاہ رہا تھا کہ بیگم نے دوسرا وار سیدھا گردن پر کر دیا۔

بولی " اگر آپ اس دور میں ہوتے تو مجھے یقین ہے آپ منگولوں کے دستے کے کمانڈر ہوتے"۔ میں نے کٹ کر گرنے سے پہلے دبے لفظوں میں کہا کہ بیگم میں حسبی نسبی سید ہوں، منگولوں کے دستے میں کیوں ہوتا؟ بیگم نے اب کے تلوار دل بھی پیوست کرتے جواب دیا "شکل مومناں، کرتوت کافراں "وہ جب جب ڈرامہ دیکھ رہی ہوتی میں گھر کے دوسرے گوشے میں سہما پڑا رہتا کہ نجانے کب ڈرامے کے کسی سین سے کوئی ایسا کبوتر نکل آئے جو سیدھا اڑ کر میرے سر پہ آن بیٹھے اور وہیں بیٹ کر جائے۔

آج نمناک آنکھوں سے زوجہ ماجدہ نے بلآ خر مزار مبارک پر حاضری دے دی۔ وہ قبر مبارک کے اطراف تادیر فاتحہ خوانی کرتی رہیں۔ وہاں سے نکلے تو گاڑی میں بھی چپ چپ سی رہیں۔ میں نے چپ رہنے کی وجہ دریافت کرنا چاہی تو بولیں " میں سوچ رہی تھی کہ ہم کتنی خواہش کرتے ہیں کہ مرنے کے بعد اپنے والدین کی قبر کے برابر میں دفن ہوں مگر یہ دیکھیں کہ ارطغرل سوگت شہر میں دفن ہوئے اور ان کا بیٹا عثمان دور برصہ شہر میں دفن ہے۔ " مجھے عقیدتمندانہ گفتگو سن کر ہچکی لگ گئی۔ پھر بولیں " ہمیں ایسی خواہش نہیں رکھنی چاہیے۔ بس جہاں موت آئے وہ کامل ایمان کے ساتھ آئے اور وہیں دفن کر دیا جائے"۔

مجھے کھانسی کا دورہ پڑا۔ سردی کافی ہے۔ گلہ خشک ہو گیا۔ پھر بیگم نے سوال داغا " یہ سلیمان شاہ کی قبر کہاں ہے؟"۔ مجھے سچ پوچھئے تو معلوم نہیں کہ سلیمان شاہ کون ہے اب؟ مجھے یہ لگا کہ بیگم نے ترکی میں ایک اور دربار ڈھونڈنا ہے شاید۔ میں نے جواب دیا " مجھے نہیں معلوم سلیمان شاہ کہاں ہے"؟ اتنا کہنے کی دیر تھی کہ بیگم نے منہ بسورتے قدرے غصے سے کہا " ہاں ہاں، آپ مجھے بتانا ہی نہیں چاہتے تا کہ مجھے وہاں نہ لے جانا پڑے۔ آپ مجھے ترکی کیوں لے آئے؟ بتائیں مجھے کیوں لائے ساتھ؟ اگر آپ نے نہیں لے جانا تھا تو مجھے نہ لاتے۔ خود آپ چرچوں، مندروں اور مسجدوں میں دنیا بھر میں اکیلے گھومنے چلے جاتے ہیں اور میں کچھ پوچھوں تو ٹکا سا جواب دے دیتے ہیں "۔

بس دوستو، یہ جو اچانک وار میری گردن پر ہوا یہ میرے وہم و گمان میں بھی نہ تھا۔ مجھے قسم سے نہیں معلوم کہ ارطغرل صاحب کے ابا حضور کدھر دفن ہیں؟ میں نے بصد ادب عرض کی " قسم اللہ کی بیگم مجھے سچ میں نہیں معلوم ورنہ یہاں لے آیا تو وہاں بھی لے ہی جاتا"۔ بیگم نے جواب دیا " اوکے، میں گوگل کر لیتی ہوں "۔ گوگل پر ان کو شاید ٹھیک سرچ کرنا نہیں آیا یا نجانے کیا ہوا؟ بہرحال وہ گوگل کر کے ناامید ہو گئیں اور پھر کچھ دیر بعد ان کا مزاج بھی نارمل ہو گیا۔ اب سفر خوشگوار طے ہو رہا تھا۔ بیگم سب بھول کر باتیں کرنے اور میرے مزاحیہ جوابات پر ہنسنے میں مشغول رہی۔ پھر آؤٹ آف دی بلیو انہوں نے ایک اور سوال داغا۔

" یہ آپ نے ارطغرل کے مزار پر ویلاگ بناتے ہوئے بھی اور جب موبائل سے لائیو جا رہے تھے تب بھی کئی بار ایک جملہ دُہرایا کہ " ہمیں ارطغرل کے گھوڑے لگا دیا اور خود ترک لوگ لبرل ہو گئے"۔ یہ گھوڑے لگانا کیا ہوتا ہے؟ مجھے اس کی سمجھ نہیں آئی"؟

اب یہ سوال سن کر مجھے ہنسی آ گئی۔ اس کی تشریح کیا کرتا؟ میں نے ہنستے ہنستے کہا " بیگم وہ بس ویسے ہی، یہ جاننا تمہارے لئے ضروری نہیں۔ بس یونہی فینز سے مزاق کر رہا تھا"۔ بس عزیزو، بیگم کا پارہ پھر چڑھ گیا اور پھر وہی گردان شروع ہو گئی کہ آپ مجھے کچھ بتانا ہی نہیں چاہتے تو لائے کیوں تھے؟ بڑی مشکل سے اسے اس تشریح پر یقین دلا کر راضی کیا " بیگم میرا مطلب تھا کہ ہمیں گھوڑے کی زین پر سوار کروا دیا ترکوں نے۔ بچہ بچہ پاکستان میں تلوار تھامے ہوائی گھوڑے پر چڑھا ہوا ارطغرل بنا ہوا ہے جبکہ خود یہ تم دیکھ لو کہ ترک کیسے آزاد خیال لبرل مسلمان ہیں "؟

وہ کچھ دیر بعد پھر مطمئن ہو گئی۔ سفر پھر خوشگوار کٹنے لگا۔ میں ابھی ایسکی شہر پہنچا ہوں۔ اپنے اپارٹمنٹ میں چیک ان کروا کر ابھی سکون سے صوفے پر بیٹھا ہی تھا کہ بیگم کی آواز آئی " اچھا، یہ یونس ایمرے کا مزار کہاں ہے؟"اب سوچ رہا ہوں کہ یونس ایمرے ترک شاعر تھا، صوفی تھا؟ اس نے فلسفہ صوفی ہی شاعری میں پیش کیا۔ مگر اس کی قبر سوا سو کلومیٹر پیچھے راہ میں چھوڑ آئے ہیں اور اب واپس اس جانب کا سفر نہیں بلکہ ایسکی شہر سے آگے کیپیڈوکیا کی جانب سفر ہے اس لئے میں سوا سو کلومیٹر واپس نہیں جانا چاہتا۔ ایک لحظہ سوچ بچار کے بعد بیگم کو جواب دیا۔

" یار وہ صوفی شاعر تھا اور وہ بحری سفر کے دوران سمندر میں ڈوب گیا"۔ اللہ کا شکر بیگم نے یقین کر لیا اور گوگل سے مدد طلب نہیں کی۔ شکر میرے مولا کا، صد شکر۔

Check Also

Watan Pukar Raha Hai

By Dr. Abrar Majid